شیر اور لومڑی

جنگل میں ایک شیر رہتا تھا، اس کے گھر سے تھوڑی ہی دور ایک لومڑی بھی رہتی تھی۔ دونوں میں گہری دوستی تھی، اس  شیر نے جنگل کے جانوروں کا شکار کرنا چھوڑ دیا تھا، وہ خود بھی سبزی کھاتا اور دوسرے جانوروں کو بھی شکار کرنے سے منع کرتا۔ لومڑی روز شیر کو کھانا لا کر دیتی اور شیر لومڑی کو جانوروں سے بچاتا۔ ایک دن شیر اور لومڑی ساتھ ساتھ گھوم رہے تھے کہ انہوں نے ایک بڑا سا کنواں دیکھا۔ کنویں میں ایک ہرن مرا ہوا تھا۔ شیر نے لومڑی سے کہا جنگل کے سارے جانوروں کو اکٹھا کرو۔ لومڑی نے جنگل کے تمام جانوروں کو اکھٹا کر لیا۔ شیر نے جنگل کے جانوروں کو مرے ہوئے ہرن کے بارے میں بتایا۔ جانوروں نے کہا کہ کیا ہم اسے دیکھ سکتے ہیں۔ شیر نے کہا ٹھیک ہے، سارے جانوروں نے ہرن کو دیکھ لیا۔ اب شیر نے جانوروں سے پوچھا کہ کس نے مارا ہے اسے؟ کسی نے جواب نہیں دیا، شیر نے لومڑی سے پوچھا، کہیں تم نے تو نہیں مارا اسے؟ لومڑی نے کہا شیر بھائی آپ مجھ پر شک کر رہے ہو؟ شیر سمجھ گیا کہ اسے لومڑی نے مارا ہے، پھر لومڑی نے سوچا کہ اس سے پہلے کہ حقیقت سب کو پتہ چل جائے، میں چپ چاپ یہاں سے نکل بھاگتی ہوں۔ لومڑی جیسے ہی جانے لگی شیر نے دیکھ لیا کہ لومڑی بھاگ رہی ہے، جانور اس کے پیچھے گئے، جب لومڑی کو پکڑ کر لایا گیا تو لومڑی نے شیر سے کہا کہ مجھے معاف کردو۔ شیر نے کہا کہ تم مجھ سے دوستی کر کے جنگل میں غلط کام کر رہی ہو، تاکہ تمہیں کوئی تنگ نہ کرے۔ شیر نے لومڑی کو اسی وقت جنگل سے نکل جانے کا حکم دیا اور سارے جانوروں سے دوستی کرلی۔