آدھا گھنٹہ لیٹ

اُلو کا پٹھا

ایک بچہ اپنے والد کے پاس بیٹھا ٹرین چلا رہا تھا۔ وہ ٹرین کو چابی دیتا اور ٹرین جب رائونڈ پورا کرکے واپس آئی تو انگلی کے اشارے سے روک کر کہتا۔ "جس جس اُلو کے پٹھے نے اترنا ہے فوراً اتر جائے۔”

بچہ بار بار یہی کر رہا تھا۔ اس کے والد نے سوچا کہ اس طرح بچہ خراب ہوجائے گا۔ انہوں نے ٹرین اٹھا کے اپنے پاس رکھ لی۔ آدھے گھنٹے بعد اس کے والد نے یہ سوچ کہ بچہ فارغ بیٹھا بور ہورہا ہے، ٹرین اسے واپس دے دی۔ بچے نے ٹرین کو دوبارہ چابی دی اور جب ٹرین رائونڈ مکمل کر کے واپس آئی تو انگلی کے اشارے روک کر آواز لگائی۔

"جس جس اُلو کے پٹھے نے اُترنا ہے فوراً اُتر جائے۔ پہلے ہی ایک اُلو کے پٹھے کی وجہ سے ٹرین آدھا گھنٹہ لیٹ ہوگئی ہے۔ "