نظر کی کمزوری کا علاج اور بچاؤ کی تدابیر

نظر کی کمزوری دور حاضر کا ایک انتہائی عام مسئلہ ہے اور ہم میں سے اکثر لوگ عمر کے کسی نہ کسی حصہ میں اس کا شکار ہوجاتے ہیں۔ اس کی کئی وجوہات ہوسکتی ہیں جیسے سورج کی تیز روشنی، کم روشنی میں پڑھنا، کمپیوٹر و ٹی سکرین کے آگے وقت گزارنا، گر دو غبار میں رہنا، عمر کا بڑھنا، وغیرہ۔

آنکھوں کی نظر چاہے قریب کی ہو یا دور کی دونوں ہی صورتوں میں پریشانی اور ذہنی تناؤ سے کمزور ہوتی ہیں۔ بہت سے بچوں کی نظریں پیدائشی کمزور ہوتی ہیں لیکن نظر کمزور ہونے کی صورت میں پریشان ہونے کے بجائے آنکھوں کی روشنی بڑھانے کی کوشش کریں۔ بہت سی غذائیں ایسی ہیں جو آنکھوں کی صحت کیلئے بہت مفید ہیں۔ اسی طرح غذاؤں کے ساتھ ساتھ زیادہ موبائل، ٹی وی، کمپیوٹر سورج کی تیز روشنی اور رات کے وقت کم لائٹ میں اسٹذیز سے پرہیز کریں آنکھوں کو تندرست رکھنے کے لئے قبض نہیں ہونا چاہئے اسکے علاوہ متوازن غذاکا استعمال آنکھوں کی روشنی میں بہت معاون ہے۔ تمباکو نوشی سے عمر بڑھنے کے ساتھ بینائی میں آنے والی تنزلی اور بصری اعصاب کو نقصان پہنچتا ہے۔ اس کے علاوہ ذیابطیس کی بیماری بھی آنکھوں کے مسائل کا سبب بنتی ہے۔

چیک اَپ کراتے رہیں

آنکھوں کی صحت کے لیے ضروری ہے کہ ان کا چیک اَپ کرانا معمول بنالیں، اس عادت سے بینائی میں کسی بھی قسم کے مسئلے کو ابتدا میں ہی پکڑ کر اس پر آسانی سے قابو پایا جاسکتا ہے۔ اگر اکثر سردرد ہو، کچھ پڑھنے کے بعد آنکھوں کو تھکاوٹ ہو، کچھ دیکھنے کے لیے اسےسکیڑنا پڑے یا کتاب کو قریب لاکر پڑھنا پڑے یہ سب بینائی میں کمزوری کا نتیجہ ہوسکتا ہے۔

بینائی تیز کرنے کے لیے مفید غذائیں

بینائی قدرت کی انمول نعمت ہے،جس کی حفاظت ہم درج ذیل غذائیں کھاکر کرسکتے ہیں۔

بھنڈی

بھنڈی میں زیکسن اور لوٹین جیسے مرکبات موجود ہوتے ہیں، جو بینائی کو بہتر بنانے میں مددگار ثابت ہوسکتے ہیں۔ اس کے علاوہ بھنڈی میں وٹامن سی کی مقدار بھی بہت زیادہ ہوتی ہے، جو آنکھوں کی صحت کے لیے مؤثر ہے۔

خوبانی

بڑھتی عمر میں بینائی کمزور ہوجاتی ہے، لیکن ڈاکٹرز کا ماننا ہے کہ بیٹا کیروٹین بینائی کو بہتر رکھنے میں مددگار ثابت ہوتا ہے۔ یہ بھی کہا جاتا ہے کہ روزانہ وٹامن سی، وٹامن ای، زنک اور کاپر سے بھرپور غذائیں کھانے سے بینائی بہتر ہوتی ہے۔ یہ تمام غذائیت خوبانی میں موجود ہے، اس سے دھندلی بینائی کا خطرہ 25فیصد تک کم ہوجاتا ہے۔

گاجر

گاجر میں وٹامن اے موجود ہوتا ہے جو آنکھوں کی جھلی اور دیگر حصوں کو بہتر کام کرنے میں مدد دیتا ہے، گاجر کا روزانہ استعمال بینائی کو بھی بہتر بناتا ہے۔

گوبھی

لوٹین ایک ایسا اینٹی آکسیڈنٹ ہے، جو بینائی کو بہتر بنانے میں مددگار ثابت ہوتا ہے۔ گوبھی میں بھی اس کی مقدار کافی زیادہ پائی جاتی ہے، اس کے علاوہ گوبھی میں موجود وٹامن سی اور بیٹا کیروٹین بھی نہایت فائدہ مند ہوتے ہیں۔

میوہ جات

میوے کھانا کس کو پسند نہیں؟ بادام، اخروٹ اور کاجو جیسے میوہ جات میں اومیگا 3 کی مقدار کافی زیادہ پائی جاتی ہے۔ یہ آنکھوں کی جھلی کو تیز روشنی سے لڑنے کی طاقت دیتا ہے اور بڑھتی عمر میں پیش آنے والے آنکھوں کے مسائل کی بھی روک تھام میں مدد کرتا ہے۔

ذیل میں چند دیسی نسخے دیئے گئے ہیں جن کے استعمال سے آپ اپنی آنکھوں کی کمزوری کو دور کر سکتے ہیں۔

* سات عدد بادام رات میں بھگوکرصبح چھلکا اتار کر مستقل کھانے سے نظر کی کمزوری دور ہو جاتی ہے۔

* پاؤں کے تلوؤں میں سرسوں کے تیل کی مالش کرنے سے آنکھوں کی روشنی بڑھتی ہے۔

* چالیس دن تک سات بادام، مصری، سونف دونوں 10+10 گرام پیس کر رات کو گرم دودھ کے ساتھ لینے سے آنکھوں کی روشنی تیز ہوتی ہے اسکے بعد رات بھر پانی نہ پیئں۔

* کھانے کے بعد سونف کھانے سے آنکھوں کی روشنی بڑہتی ہے۔

* پسی ہوئی سونف آدھا چمچ میں تھوڑی سی چینی ملاکر دودھ کے ساتھ لے لیں اس سے نظر بڑھے گی۔

* پھول گوبھی کا رس پینے سے آنکھوں کی کمزوری دور ہوتی ہے۔

* آنکھوں کے آگے اندھیرا آتاہوتو آنولے کا رس پانی میں ملا کر صبح و شام چار دن پینے سے فائدہ ہوتا ہے۔

* پیاز کے لگاتار استعمال سے آنکھوں کی روشنی بڑھتی ہے۔

* تازہ دودھ چھان کر بغیر گرم کیئے مصری یا شہد، بھیگی ہوئی بیس کشمش کا پانی ملاکر چالیس دن پینے سے آنکھوں کی روشنی بڑھتی ہے۔

* بیر آنکھوں کی روشنی میں اضافہ کرتا ہے۔

* آنکھوں کی بینائی تیز کرنے کے لئے مچھلی کا استعمال ضرور کریں۔

* گرین ٹی نہ صرف آنکھوں میں ہونے والے انفیکشن کے خطرات کو کم کرتی ہے بلکہ آنکھوں کیلئے بھی مفید ہے۔

* خشک ناریل، کیلا اور گنا آنکھوں کے لئے مفید ہیں۔

 

نوٹ: یہ مضمون عام معلومات کے لیے ہے۔ قارئین اس حوالے سے اپنے معالج سے بھی ضرور مشورہ لیں۔